"اگر کوئی ساری عمر عبادت کرتا رہے ، لیکن آخر میں امام مہدیؑ اور حضرت عیسیٰؑ کی مخالفت کربیٹھا، جن کو دنیا میں دوبارہ آنا ہے۔ عیسیٰؑ کا جسم سمیت اور مہدیؑ کا ارضی ارواح کے ذریعے آنا ہے۔ تو وہ بلیعم باعور کی طرح دوزخی اور ابلیس کی طرح مردود ہے۔” "اگرکوئی ساری عمر کتوں جیسی زندگی بسر کرتا رہا، لیکن آخر میں اُن کا ساتھ اور اُن سے محبت کر بیٹھا، تو وہ کتے سے حضرت قطمیر بن کر جنت میں جائے گا۔”
فرمانِ سلطان الفقرء
حضرت سیدنا ریاض احمد گوہر شاہی

امام مہدی علیہ اسلام

امام مہدی علیہ السلام کے ظہور بارے جانئے

عیسیٰ علیہ السلام

عیسیٰ علیہ السلام کے دوبارہ ظہور کے بارے جانئے

دجال / شیطان

دجال / شیطان کے بارے میں چند حقائق

حدیث میں ہے کہ دجال گدھے پر چڑھ کر آئے گا اور ایک آنکھ سے کانا ہوگا۔اگر واقعی وہ گدھے پر چڑھ کر آئے گا اور کانا ہوگا تو ہم تو پہچان لیں گے نا کہ یہ دجال ہی ہے۔

جسکے ہزاروں پیروکار ہونگےکیا اس کو کوئی کار نہیں دے گا؟اگر اس نے یہاں سے اسلام آباد جانا ہو تو گدھے پر کب پہنچے گا؟جبکہ یہ کاروں اور ہوائی جہازوں کا زمانہ ہے۔پھر وہ کہتے ہیں کہ نہیں جب یہ زمانہ ختم ہو جائیگا سائنس کا تو پھر وہ زمانہ آئیگا ، اس وقت دجال گدھے پر بیٹھے گا۔اور اگر  یہ زمانہ ختم ہوجائیگا ، کاریں بھی نہیں ہونگی، اگر گدھے ہونگے تو گھوڑے بھی تو ہونگے ناں؟تو وہ گھوڑے پر کیوں نہیں بیٹھے گا؟جو اس سے اعلیٰ سواری ہے۔پھر کہتے ہیں کہ یہ کوئی اشارہ ہوگا۔اشارہ یہ ہوگا کہ گدھا ایک شیطان ہے ، دجال شیطان کی پوری طاقت رکھے گااور ایک آنکھ سے محروم کا مطلب ایک علم یعنی باطنی علم سے محروم ہوگا۔

دجال موجودہ چاند کے سامنے اپنی شیطانی قوت سے ایک مصنوعی چاند بنائیگا اور کہے گا کہ اس چاند میں جوشبیہ آرہی ہے وہ دراصل اُس(دجال) کی ہے۔ جن کے دلوں میں اسمِ ذات اللہ کا نور نہیں ہوگا وہی اس تصویر کو حقیقت مان لیں گے۔ لیکن جب اس چاند کی تصویر کسی بھی جدید کیمرے سے لی جائیگی تب وہ مصنوعی چاند کیمرے کی آنکھ میں قید نہیں ہوپائیگا اور اصل چاند کیمرہ میں محفوظ ہوگا جو بعد ازاں واضح دیکھا جاسکے گا۔

دجال اپنی پشت پر شیطانی قوت سے مصنوعی مہر مہدیت ظاہر کریگا جوکہ واضح طور پر پہچانی جاسکے گی اور اس مہر کو دجال نشانی کے طور پر ظاہر کریگا۔

دجال کے خروج اور عروج میں عورتوں کا کردار بہت اہم ہوگا۔

آپ صلی اللہ علیہ و سلم  نے فرمایا کہ
’’جب دجال نکلے گا تو سب سے پہلے عورتیں اس کی بات مانیں گی۔‘‘
(رواہ الطبرانی فی الاوسط و رجالہ رجال الصحیح)

اور ایک دوسری حدیث مبارکہ  میں آپ صلی اللہ علیہ و سلم نے فرمایا کہ
’’دجال کی طرف سب سے زیادہ عورتیں جائیں گی یہاں تک کہ آدمی اپنے گھر میں اپنی ماں، چچی، بہن، بیوی اور بیٹی کو اس ڈر سے باندھ دے گا کہ کہیں وہ دجال کی طرف نہ چلی جائیں۔‘‘

ابو سعید خدری کہتے ہیں کہ
’’دجال جہاں پر جانے کا ارادہ کرے گاتو ایک لئیبہ نامی عورت اس سے قبل وہاں پر جاکر لوگوں سے کہے گی کہ دجال تمہاری طرف آرہا ہے لہذا اس سے ڈرواور اس کی مخالفت کے نتائج سے خبردار رہو۔‘‘
کنزالعمال، ج 14،ص 602،فتن ابن حماء ، ص 151