یہاں پر آنے کا مقصد کوئی سیاست نہیں ہے، کسی فرقے کی دل آزاری نہیں ہے، کوئی حکومت پر نقطہ چینی نہیں ہے۔ ہر شہر میں، ہر محلے میں، ہر گھر میں کچھ دل والے ہوتے ہیں، ان کو نکالنا مقصد ہے اور دل کی آواز انکے دلوں تک پہنچانا مقصود ہے۔
سلطان الفقرء
حضرت سیدنا ریاض احمد گوہر شاہی مدظلہ العالی

حضرت سیدنا ریاض احمد گوہر شاہی مدظلہ العالیٰ کا مختصر تعارف

یہ وہ گوہر شاہی ہیں جنہوں نے تین سال تک سیون شریف کی پہاڑیوں اور لال باغ میں اللہ کے عشق کی خاطر چلہ کشی کری، اللہ کو پانے کی خاطر دنیا چھوڑی، پھر اللہ کے حکم ہی سے دوبارہ دنیا میں آئے۔ لاکھوں دلوں میں اللہ کا ذکر بسایا اور لوگوں کو اللہ کی محبت کی طرف راغب کیا ، ہر مذہب والوں نے گوہر شاہی کو مسجدوں، مندروں، گردواروں اور گرجاگھروں میں روحانی خطاب کےلئے مدعو کیا، اور ذکر قلب حاصل کیا، بے شمار مرد و زن ان کی تعلیم سے گناہوں سے تائب ہوئے اور اللہ کی طرف جھک گئے۔ بے شمار لاعلاج مریض ان کے روحانی علاج سے شفا یاب ہوئے، پھر اللہ نے ان کا چہرہ چاند پر دکھایا، پھر حجر اسود میں بھی ان کی تصویر ظاہر ہوئی، پوری دنیا میں ان کی شہرت ہوگئی۔ لیکن کورچشم مولویوں کو اور ولیوں سے حسد، بغض رکھنے والے مسلمانوں کو یہ شخص پسند نہ آیا، ان کی کتابوں کی تحریروں میں خیانت کرکے ان پر کفر اور واجب القتل کے فتوئے لگائے۔

مانچسٹر میں ان کی رہائش گاہ پر پیٹرول بم پھینکا، کوٹری میں دوران ِ خطاب ان پر ہینڈگرینیڈ بم سے حملہ کیا گیا۔ لاکھوں روپے ان کے سر کی قیمت رکھی گئی۔ پانچ قسم کے سنگین جھوٹے مقدمات، اندرون ِ ملک ان کو پھنسانے کےلئے قائم کیے گئے۔ نواز شریف کی وجہ سے حکومت سندھ بھی شامل ہوگئی تھی۔ دو کیس قتل، ناجائز اسلحہ، ناجائز قبضہ کا دفعہ بھی لگا دیا گیا۔ امریکہ میں بھی ایک عورت سے زیادتی اور حبس ِ بےجا کا مقدمہ بنایا گیا۔ زرد صحافت نے انہیں زمانے میں خوب بدنام کیا، لیکن آخر میں عدالتوں نے شنوائی اور تحقیقات کے بعد تمام مقدمات جھوٹے قرار دے کر خارج کردیے اور اللہ نے اپنے اس دوست کو ہر مصیبت سے بچائے رکھا۔

حضرت گوہر شاہی کی باطنی شخصیت کے چند حقائق

19سال کی عمر میں جسئہ توفیق ِالٰہی آپ کے ساتھ لگادیا گیا تھا جو ایک سال رہا اور اُس کے اثر سے کپڑے پھاڑکر صرف ایک دھوتی میں جام داتارؒ کے جنگل میں چلے گئے تھے۔ جسئہ توفیق ِالٰہی عارضی طور پر ملا تھا، جو کہ 14 سال غائب رہا، اور پھر 1975میں دوبارہ سیون شریف کے جنگل میں لانے کا سبب بھی یہی جسئہ توفیق الٰہی ہی تھا !

25سال کی عمر میں جسئہ ِگوہر شاہی کو باطنی لشکر کے سالارکی حیثیت سے نوازا گیا، جس کی وجہ سے ابلیسی لشکر اور دنیاوی شیطانوں کے شر سے محفوظ رہے۔ جسئہ ِتوفیق ِالٰہی اور طفل ِنوری، ارواح، ملائکہ اور لطائف سے بھی اعلیٰ (Special) مخلوقیں ہیں، ان کا تعلق ملائکہ کی طرح براہِ راست رب سے ہے اور ان کا مقام ، مقامِ احدیت ہے۔

35سال کی عمر میں 15 رمضان1976 کو ایک نطفہء نور قلب میں داخل کیا گیا، کچھ عرصے بعد تعلیم و تربیت کیلئے کئی مختلف مقامات پر بلایا گیا۔ 15 رمضان1985 میں جبکہ آپ اللہ کے حکم سے دنیاوی ڈیوٹی پر حیدرآباد مامور ہو چکے تھے، وہی نطفہء نور طفلِ نوری کی حیثیت پاکر مکمل طور پر حوالے کردیا گیا، جس کے ذریعے دربارِ رسالت ؐمیں تاجِ سلطانی پہنایا گیا۔ طفلِ نوری کو بارہ سال کے بعد مرتبہ عطا ہوتا ہے۔ لیکن آپ کو دنیاوی ڈیوٹی کی وجہ سے یہ مرتبہ 9 سال میں ہی عطاہوگیا۔

جشنِ شاہی (15 رمضان المبارک) منانے کی وجوہات

15 رمضان 1977کو اللہ کی طرف سے خاص الہامات کا سلسلہ بھی شروع ہوا تھا۔راضیہ مرضیہ کا وعدہ ہوا، مرتبہ بھی ارشاد ہواتھا۔چونکہ آپ کے ہر مرتبے اور معراج کا تعلق پندرہ رمضان سے ہے۔ اِس لئے اِسی خوشی میں جشنِ شاہی اس روزمنایا جاتا ہے۔

آپ نے 1978 میں حیدرآبادآکر رشدو ہدایت کا سلسلہ جاری کردیا۔ اور دیکھتے ہی دیکھتے یہ سلسلہ پوری دنیا میں پھیل گیا۔ لاکھوں افراد کے قلوب اللہ اللہ میں لگ گئے۔ بے شمار افراد کے قلوب پر اسم اللہ نقش ہوا اور ان کو نظر آیا۔لاتعداد کشف القبوراور کشف الحضور تک پہنچے۔ا ن گنت لاعلاج مریض شفا یاب ہوئے۔ حضرت سیدنا ریاض احمد گوھر شاہی نے 1980میں باقاعدہ تنظیم کے ذریعہ پاکستان سے دعو ت و تبلیغ کا کام شروع کیا۔ آپ کا پیغام ’’اللہ کی محبت‘‘ کو بہت پذیرائی حاصل ہوئی۔ ہر مذہب کے افراد آپ سے عقیدت اور محبت کرنے لگے اور اپنی اپنی عبادت گاہوں میں حضرت گوھر شاہی کو خطابات کی دعوت دینے لگے۔ اس کی تاریخ میں نظیر نہیں ملتی کہ کسی شخصیت کو ہر مذہب والوں نے اپنی عبادت گاہوں کے اسٹیج اور منبر پر بٹھا کر عزت دی ہو۔ ہندو‘مسلم ‘ سکھ‘ عیسائی اور ہر مذہب والوں کے دل گوھر شاہی کی صحبت سے ذکر اللہ سے جاری ہوئے یہ آپ کی ادنی سی کرامت ہے یوں تو آپکی بے شمار کرامتیں ہیں۔ ہر ایک کا تذکرہ نا ممکن ہے۔

اظہارِ لاتعلقی

27 نومبر 2001 حضرت سیدنا ریاض احمد گوہر شاہی مدظلہ العالی کے پردہ فرماجانے کے بعد یونس ملعون نے ویب سائٹ(www.goharshahi.com) کو ہائی جیک کرلیا اور اس ویب سائٹ پر حضرت گوہر شاہی کا نام اور تصاویر استعمال کرکے دل آزار مواد اور خود ساختہ نظریہ و تعلیمات پیش کرنا شروع کردی۔ بیگم سیدنا ریاض احمد گوہر شاہی کو اس عمل کی اطلاع کی گئی تو انہوں نے 31 دسمبر 2001 کو بذریعہ مقامی اخبارات یونس ملعون سے مکمل لاتعلقی کا اعلان کیا جسکی تصویری جھلک آپکے سامنے ہے۔
مزید معلومات جاننے کیلئے یہاں کلک کریں

غلط فہمی

عوام الناس میں حضرت ریاض احمد گوہر شاہی کے صاحبزادوں کو لیکر کچھ غلط فہمیاں ہیں، جسکی وجہ سے ہمیں اس ویب (www.hammadriaz.com)  کا اجراء کرنا پڑا۔ پچھلے کچھ عرصہ سے نام نہاد مہدی فاؤنڈیشن ملعون یونس جو کہ خود کو حضرت گوہر شاہی کا جانشین کہتا ہے اور ساتھ ہی ساتھ یہ ملعون اسلام مخالف اور ملک مخالف سرگرمیوں میں بھی ملوث ہے۔ اور ہماری واحد جماعت انجمن سرفروشانِ اسلام رجسٹرڈ پاکستان کے امیران و مشیران کے قتل میں بھی ملوث ہے۔

یونس ملعون ہمارے والد محترم حضرت سیدنا ریاض احمد گوہر شاہی کا نام اور تصاویر استعمال کرتا ہے اور اپنی خود ساختہ تعلیمات اور کفریہ عقیدہ کو ہمارے والد صاحب کی روحانی تعلیمات سے جوڑنے کی کوشش کرتا ہے اس لئے شاید عوام الناس میں یہ غلط فہمی پیدا ہوسکتی ہے کہ کہیں جو من گھڑت تعلیمات یہ شخص دے رہا ہے کہ اس کا تعلق گوہر شاہی سے تو نہیں۔

ہم یہ پہلے بھی واضح کرتے آئے ہیں اور بار بار عوام الناس اور مقامی انتظامیہ کو مختلف اخباروں، اجتماعات اور میڈیا پر واضح کرتے آئے ہیں کہ ہمارا اس یونس ملعون نامی شخص اور اسکی نام نہاد جماعت مہدی فاؤنڈیشن سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اور ہم صاحبزادگان اسکے کسی بھی عمل کے ذمہ دار نہیں ہیں۔ کیونکہ یونس ملعون اسلام دشمن بھی ہے اور ملک پاکستان کا دشمن بھی۔

Contacts

مزید معلومات اور سوالات کے لئے ہم سے رابطہ کریں

Contact@sufisaint.com

Fax: +92-223-410583

دربارِ عالیہ گوہر شاہی اللہ ھو پہاڑی، خدا کی بستی نمبر۔۱ کوٹری جامشورو سندھ پاکستان